2

Too bhula dega


تِری جبیں پہ لکھا تھا کہ تُو بھلا دے گا
سو میں بھی بھانپ گیا تھا کہ تُو بھلا دے گا 

ہر ایک شخص سے لڑتا رہا میں تیرے لیے 
ہر اِک نے مجھ سے کہا تھا کہ تُو بھلا دے گا 

ہ تیری آنکھوں پہ حلقے سے پڑ گئے کیسے 
مجھے تو تُو نے کہا تھا کہ تُو بھلا دے گا 

نکال لایا ہے الزام پھر پُرانے تُو 
یہ ہم نے طے بھی کیا تھا کہ تُو بھلا دے گا 

کچھ اس لیے بھی کہ اِک تِل تھا تیری آنکھوں میں 
مجھے تو تب بھی پتا تھا کہ تُو بھلا دے گا.. 

2

sad poetry




ﯾُﻮﮞ ﺭﮦِ ﻭﻓﺎ ﮐﯽ ﺻﻠﯿﺐ ﭘــﺮ ______ ﺩﻭ
ﻗﺪﻡ ﺍُﭨﮭﺎﻧﮯ ﮐﺎ ﺷُﮑــــــــﺮﯾﮧ !!!
ﺑﮍﺍ ﭘُﺮ ﺧﻄﺮﺗﮭﺎ ﯾﮧ ﺭﺍﺳﺘﮧ ــــــــــــ
ﺗﯿــــﺮﮮ ﻟَﻮﭦ ﺟﺎﻧﮯ ﮐﺎ ﺷُﮑـــــــﺮﯾﮧ !!!
ﺟﻮ ﺍُﺩﺍﺱ ﮨﯿﮟ ﺗﯿﺮﮮ ﮬِﺠﺮ ﻣﯿﮟ ـــــــ
ﺟِﻨﮭﯿﮟ ﺑﻮﺟﮫ ﻟﮕﺘﯽ ﮨﯿﮯ ﺯﻧﺪﮔﯽ !
ﺍُﻧﮩﯿﮟ ﺩﯾﮑﮫ ﮐﺮ ﺳﺮِ ﺑﺰﻡ ﯾﻮﮞ ــــــــــــ
ﺗﯿﺮﮮ ﻣﻨﮧ ﭼُﮭﭙﺎﻧﮯ ﮐﺎ ﺷُﮑــﺮﯾﮧ !!!
ﻣُﺠﮭﮯ ﺧﺴﺘﮧ ﺣﺎﻝ ﺳﺎ ﺩﯾﮑﮫ ﮐﺮ ﺗﯿﺮﮮ
ﮨﻮﻧﭧ ﭘﮭﻮﻝ ﺳﮯ ﮐِﮭﻞ ﺍُﭨﮭﮯ !!!
ﻣﺠﮭﮯ ﻏﻢ ﻧﮩﯿﮟ ﻣﺠﮭﮯ ﺩﯾﮑﮫ ﮐﺮ ۔۔۔۔۔۔۔
ﺗﯿﺮﮮ ﻣُﺴﮑﺮﺍﻧﮯ ﮐﺎ ﺷُﮑﺮﯾﮧ !!!!
ﺗﯿﺮﯼ ﯾﺎﺩ ﮐِﺲ ﮐِﺲ ﺑﮭﯿﺲ ﻣﯿﮟ ﻣﯿﺮﮮ
ﺷﻌﺮ ﻭ ﻧﻐﻤﮧ ﻣﯿﮟ ﮈﮬﻞ ﮔﺌﯽ !!
ﯾﮧ ﮐﻤﺎﻝ ﮨﮯ ﺗﯿـــــــﺮﯼ ﯾﺎﺩ ﮐﺎ ـــــــــــــــ
ــــ ﻣُﺠﮭﮯ ﯾﺎﺩ ﺁﻧﮯ ﮐﺎ ﺷُﮑﺮﯾﮧ !!
ﻣُﺠﮭﮯ ﻋِﻠــﻢ ﮨﮯ ﻧﮩﯿﮟ ﻣِﭧ ﺳَﮑﯽ
ﺗﮭﯽ ﺟﻮ ﮔُﻔﺘﮕﻮ ﮐﯽ ﻭﮦ ﺗﺸﻨﮕﯽ ـ
ﻣِﻼ ﺩِﯾﺪ ﺳﮯ ﺑﮭﯽ ﺳَﮑﻮﮞ ﻣُﺠﮭﮯ
ــــــــــــــ ﺳﺮِ ﺑﺎﻡ ﺁﻧﮯ ﮐﺎ ﺷُﮑﺮﯾﮧ !!
ﮨﮯ ﺯﻣﺎﻧﮯ ﺑﮭﺮ ﮐﺎ ﺍُﺻـــــﻮﻝ ﺟﻮ
ـــــــــــــــ ـــ ﻭﮦ ﺍُﺻﻮﻝ ﺗُﻢ ﻧﮯ ﻧﺒﮭﺎ
ﺩﯾﺎ !!
ﯾﮩﯽ ﺭﺳﻢ ﭨﮭﮩﺮﮮ ﮔﯽ ﻣﻌﺘﺒـﺮ ــــــــ
ﻣﺠﮭﮯ ﺑﮭﻮﻝ ﺟﺎﻧﮯ ﮐﺎ ﺷُﮑﺮﯾﮧ !!
0

Tere Ishq nachaya kar ke thaya thaya

Tere Ishq nachaya kar ke thaya thaya
0

CLASS POETRY



آنکھیں کھلی رہیں گی تو منظر بھی آئیں گے
زندہ ہے دل تو اور ستمگر بھی آئیں گے

پہچان لو تمام فقیروں کے خدوخال
کچھ لوگ شب کو بھیس بدل کر بھی آئیں گے

گہری خموش جھیل کے پانی کو یوں نہ چھیڑ
چھینٹے اّڑے تو تیری قبا پر بھی آئیں گے

خود کو چھپا نہ شیشہ گروں کی دکان میں
شیشے چمک رہے ہیں تو پتھر بھی آئیں گے

اّس نے کہا--گناہ کی بستی سے مت نکل
اِک دن یہاں حسین پیمبر بھی آئیں گے

اے شہریار دشت سے فرصت نہیں--مگر
نکلے سفر پہ ہم تو تیرے گھر بھی آئیں گے

محسن ابھی صبا کی سخاوت پہ خوش نہ ہو
جھونکے یہی بصورتَ صرصر بھی آئیں گے
0

Sab qareenay usi dildaar ke

Sab qareenay, usi dildaar ke, rakh dete haiN
Hum ghazal men bhi hunar yaar ke rakh dete
haiN
Shayad ajayeN kabhi chashm e khariidar men
hum
Jan O dil biich mein bazaar ke rakh dete haiN
Zikr e janaN mein yeh duniya ko kahaN le aaye
Log kyuN mas’alay bekaar ke rakh dete haiN
Zindagii teri amaanat hai magar kya kijiye
Log yeh bojh bhi thak haar ke rakh dete haiN
Hum to chahat men bhi ghalib ke muqallid hain
‘Faraz’
Jis pe marte haiN use maar ke rakh dete haiN
0

Dil e Muztar Ko Samghaya


Dil e Muztar Ko Samghaya Bohat Hay

Mager Is Dil Nay Terpaya Bohat Hay

Qiyamat Hay Yeah Tarqay Arzoo Bhi

Mujhe Aksar Woh Yaad Aya Bohat Hay

Mager Is Dil Nay Terpaya Bohat Hay

Dil e Muztar Ko Samghaya Bohat Hay

Tabasum Bhi Haya Bhi Bayrokhi Bhi

Yeah Anadz ay Satam Bhaya Bohat Hay

Rahi Hasti Kay Is Chaltay Safar Main

Tumhari Yaad Ka Saya Bohat Hay

qayaamat hai yeh tarh ke aarzoo bhi

mujhe aksar woh yaad aaya bahot hai

magar is dil ne tadpaaya bahot hai

dil-e-muztar ko samjhaaya bahot hai

0

سمندروں کے سفر میں لازم ھے



سمندروں کے سفر میں لازم ھے پانیوں سے کلام کرنا

جو سجدہ گاہیں تلاش کرنے لگے تو عمریں گذار دو گے

خود اپنے سائے کی صف بچھانا وھیں سجود و قیام کرنا
میں کارواں سے بچھڑ کر اندھی مسافتوں کے عذاب میں ھوں
مرا بھی اے ساربان شمس و قمر کوئی انتظام کرنا

جہاں دل میں جو روشنی ھے وہ تیرا حصہ وہ تیرا قصہ

جو ظلمتیں ھیں ملامتیں ھیں وہ سب کی سب میرے نام کرنا

یہ تازہ لفظوں کے سارے گلدستے سوکھ جائیں گے جب وہ آئے

تم ان کی آمد پہ احتیاطا کچھ اور بھی انتظام کرنا

اپنے لئے تو ھوتا ھے جشن کا اک سماں ھمیشہ

کسی بھی مہماں کا ھم فقیروں کے دل میں رکنا قیام کرنا —


Naila Khan
 
Copyright © Poetry